Embracing Cultural Diversity: Student Life in Australia

Updated on July 5, 2024


Introduction:

Table of Contents

آج میرے بیٹے کی شادی تھی میں بہت خوش تھی ہر ماں کا ارمان ہوتا ہے کہ اس کا بیٹا بیا جائے گھر بہو آئے اور گھر خوشیوں سے بھر جائے خیر اب تو میری بری ہڈیوں میں اتنی جان بھی نہیں تھی کہ میں گھر کے کام کاج کر سکتی اس لیے میں نے اپنے بیٹے کے لیے پیاری سی لڑکی چنی تھی سونے پر سہاگہ یہ ہوا کہ میری بہو بہت زیادہ جہیز اپنے ساتھ لائی تھی اور ساتھ ایک نوکرانی بھی لائی تھی پہلے پہل تو مجھے حیرت ہوئی اور تھوڑا عجیب بھی لگا کہ بہو نوکرانی ہی لے آئی ہے جبکہ کام کے لیے نوکرانی تو میں بھی رکھ سکتی تھی لیکن مجھے نوکرانیوں کے کام پسند ہی نہیں آتے تھے میں نے من ہی من سوچا کہ لیا ہفتہ  دو ہفتہ یہاں رہے پھر اس کو چلتا کروں گی

لیکن جیسے جیسے وقت گزرتا گیا بلقیس میرے گھر میں اپنی جگہ بناتی گئی نہ جانے کیا تھا جو مجھے اس کی طرف کھینچتا تھاجہاں تک میری بہو کی بات تھی تو اس کو میں نے پہلی بار پالر میں دیکھا تھا جہاں میں اپنی بھانجی کے ساتھ گئی تھی  لیکن جب میں نے پارلر والی لڑکی کو دیکھا تو مجھے وہ بہت اچھی لگی تھی اس کی ماں بھی اس کے ساتھ ہوتی تھی باتوں باتوں میں میں نے ان سے رشتے کی بات کر لی اور یہ سلسلہ نکل پڑا اب میں اپنے اس فیصلے سے مطمئن تھی میری بہو نور  بہت اچھی تھی اور کام والی بلقیس بھی لیکن بہو کے ساتھ جو ملازمہ آئی تھی وہ ہر وقت نقاب میں رہتی تھی یہ بات کافی عجیب تھی خیر میں خاموش ہی رہی میں اپنا کچن کا کام کسی کو کرنے نہیں دیا کرتی تھی لیکن وہ لڑکی یہاں بھی مجھے مات دے گئی تھی وہ بہت ہی پاکیزہ عبادت گزار تھی میں نے اسے دل سے خوش ہو کر کھانا بنانے کا کام بھی سونپ دیا تھا اب میں بہت سکون میں تھی وہ لڑکی نہ صرف گھر کے کام کرتی بلکہ میری بھی اتنی خدمت کرتی کہ میں حیران رہ جاتی لیکن آج تک میں نے اس کا چہرہ نہ دیکھا تھا کیونکہ وہ ہر وقت نقاب کیے رہتی تھی

میں نے کئی بار سمجھایا کہ گھر میں تو نقاب اتار دویہاں ہوتا ہی کون تھا ہم ساس بہو ہوتے تھے باقی بیٹا صبح سویرے ہی کام پر نکل جاتا تو شام کو لوٹتا تھا مگر میری بات پہ وہ بہت خوفزدہ ہو جاتی اس کے ہاتھ بھی کانپنے لگتے تھے میری بہو آگئی اور اس کے سامنے کھڑی ہو گئی امی جان اس کو کچھ نہ کہیں یہ اپنا چہرہ کسی کو نہیں دکھاتی بہت ہی پردے دار ہے اس کو پردے میں ہی سکون ملتا ہے تو آپ اسے نہ کہا کریں بلقیس کے جانے کے بعد میری بہو میرے پاس آ کر بیٹھ گئی اور آہستہ سے بولی امی جان کھانا لذیذ بناتی ہے میں نے دیکھا ہے رات گئے تک آپ کو دباتی ہے کہیں ایسا نہ ہو کہ ہماری فرمائش پر بدک جائے اور کام ہی چھوڑ کر چلی جائے پھر آج کل کہاں ملتی ہیں ایسی ملازمائیں بہو کی بات پہ میں خاموش ہو گئی تھی یوں وقت گزرتا گیا ایک رات میری آنکھ کھلی اور میں پانی لینے کچن کی طرف جانے لگی میں نے دیکھا کہ بلقیس کچن کے ساتھ والے کمرے میں تہجد کی نماز ادا کر رہی ہے میری نظریں اب بلقیس پر تھیں میں نے دل ہی دل میں سوچا کہ کتنی عبادت گزار ہے وہ نماز میں مگن تھی وہ اس رخ بیٹھی تھی کہ اس کا چہرہ دوسری طرف تھا لیکن میں جانتی تھی کہ اس وقت اس نے نقاب نہیں کیا ہوا تھا میں تجسس کے ہاتھوں مجبور ہو کر وہاں کھڑی رہی کہ شاید اس کی ایک جھلک مجھے دکھائی دےاور اچانک جب اس نے سلام پھیرا تو اس کے چہرے کا رخ میری جانب ہو گیا تھا جیسے ہی اس کے چہرے پر میری نظر پڑی میں گرتے گرتے بچی میری روح تک لرز گئی

میں نے کئی بار سمجھایا کہ گھر میں تو نقاب اتار دویہاں ہوتا ہی کون تھا ہم ساس بہو ہوتے تھے باقی بیٹا صبح سویرے ہی کام پر نکل جاتا تو شام کو لوٹتا تھا مگر میری بات پہ وہ بہت خوفزدہ ہو جاتی اس کے ہاتھ بھی کانپنے لگتے تھے میری بہو آگئی اور اس کے سامنے کھڑی ہو گئی امی جان اس کو کچھ نہ کہیں یہ اپنا چہرہ کسی کو نہیں دکھاتی بہت ہی پردے دار ہے اس کو پردے میں ہی سکون ملتا ہے تو آپ اسے نہ کہا کریں بلقیس کے جانے کے بعد میری بہو میرے پاس آ کر بیٹھ گئی اور آہستہ سے بولی امی جان کھانا لذیذ بناتی ہے میں نے دیکھا ہے رات گئے تک آپ کو دباتی ہے کہیں ایسا نہ ہو کہ ہماری فرمائش پر بدک جائے اور کام ہی چھوڑ کر چلی جائے پھر آج کل کہاں ملتی ہیں ایسی ملازمائیں بہو کی بات پہ میں خاموش ہو گئی تھی یوں وقت گزرتا گیا ایک رات میری آنکھ کھلی اور میں پانی لینے کچن کی طرف جانے لگی میں نے دیکھا کہ بلقیس کچن کے ساتھ والے کمرے میں تہجد کی نماز ادا کر رہی ہے میری نظریں اب بلقیس پر تھیں میں نے دل ہی دل میں سوچا کہ کتنی عبادت گزار ہے وہ نماز میں مگن تھی وہ اس رخ بیٹھی تھی کہ اس کا چہرہ دوسری طرف تھا لیکن میں جانتی تھی کہ اس وقت اس نے نقاب نہیں کیا ہوا تھا میں تجسس کے ہاتھوں مجبور ہو کر وہاں کھڑی رہی کہ شاید اس کی ایک جھلک مجھے دکھائی دےاور اچانک جب اس نے سلام پھیرا تو اس کے چہرے کا رخ میری جانب ہو گیا تھا جیسے ہی اس کے چہرے پر میری نظر پڑی میں گرتے گرتے بچی میری روح تک لرز گئی

یا اللہ یہ تو مجھے اچانک سے کھانسی کا دورہ پڑا اور میں نے جلدی سے پانی کا گلاس منہ سے لگا لیا لیکن تب تک بلقیس کی نظر مجھ پر پڑ چکی تھی وہ بھی گھبرا کر اٹھ گئی تھی اور کمرے کے تاریکی گوشے کی جانب بھاگ کر خود کو میری نظروں سے چھپانے کی کوشش کرنے لگی تھی لیکن میں اس کو تب تک دیکھ چکی تھی تب سے مجھے بہت بے چینی ہو رہی تھی ساری رات میں نے کانٹوں پر گزاری تھی ساری رات میں سو نہ سکی یہ سب آخر کیا تھا ایسا کیسے ہو سکتا ہے مجھے صبح کا بے صبری سے انتظار تھا میں بس چاہتی تھی کہ بہو کے روبرو کھڑی ہو کر اس سے سارا سچ اگلا لوں لیکن میں چاہتی تھی کہ ایک بار میرا بیٹا آفس چلا جائے تو میں بہو سے پوچھوں کہ یہ کیا ماجرہ ہے اگر میرے بیٹے کو اس بات کی بھنک بھی پڑ جاتی تو وہ اسے اسی وقت طلاق دے دیتا طلاق کیا شاید وہ تیش میں آ کر نور کو جان سے ہی مار دیتا بات ہی اتنی بڑی تھی کہ کچھ بھی ہو سکتا تھا میں نہیں چاہتی تھی کہ میرے بیٹے کا گھر اجر جائے میں نور کو شک کا فائدہ دے کر اسے سچ جاننا چاہتی تھی لیکن اتنا تو میں سوچ ہی چکی تھی کہ اگر اس کا رتی برابر بھی قصور نکلا تو اس کو طلاق میں خود دلواؤں گی مجھے کچھ سمجھ نہیں آرہا تھا کہ آخر قصور کس کا ہے میرا دماغ کام نہیں کر رہا تھا میری بہو نور اٹھ چکی تھی اس نے ناشتہ کر لیا تھا اور اب وہ اپنے کمرے میں چلی گئی تھی میرا بیٹا اپنے آفس چلا گیا تھا یہی وقت تھا جاننے کا میں فورا بہو کے کمرے کی طرف گئی دستک دے کر اندر چلی گئی بہو اپنی الماری سیٹ کر رہی تھی وہ حیرت سے میری طرف دیکھنے لگی میں نے کمرہ لاک کیا اور اس کے بیڈ پر بیٹھ گئی اور اس سے پوچھا کہ یہ ماجرہ آخر کیا ہے میرے گھر میں کیسا کھیل تم دونوں کھیل رہی ہو

بلقیس کون ہے بلقیس کا آخر کیا راز ہے آج میں سچ جان کر رہوں گی اگر تم نے مجھے سچ نہ بتایا تو میری بات پہ نور میرے قدموں میں گر گئی امی جان مجھے معاف کر دیں اس میں میرا کوئی قصور نہیں آخر یہ سب کیا ماجرا ہے مجھے پوری بات بتاؤ وہ میری بات سن کر بہت گھبرا گئی امی میں آپ کو سب بتاتی ہوں آپ پہلے وعدہ کریں کہ قاسم کو اس کا علم نہیں ہونے دیں گی ورنہ دیکھو نور بیٹا مجھے اب سچ بتا دو میں سچ جانے کے بعد ہی فیصلہ کروں گی  وہ مجھے اپنا قصہ سنانے لگی اس نے بتایا کہ میں نور کھاتے پیتے گھر سے تعلق رکھتی تھی ہم تین بہن بھائی تھے بڑی بہن کی شادی تین سال پہلے ہو گئی تھی تب سے وہ باہر ملک میں رہتی تھی اس کے بعد میں اور میرا چھوٹا بھائی فہد میں کالج جاتی تھی فہد سکول ہم سب بہت خوش تھے کہ اچانک پاپا کو بزنس میں لاس ہو گیا اور ہمارے مالی حالات بہت خراب ہو گئے میرا کالج چھوٹ گیا اور فیس نہ دینے کی وجہ سے فہد کو بھی سکول سے نکال دیا گیا پاپا قرضے میں ڈوب گئے تھے

کسی رشتہ دار نے تو پوچھا نہیں یہ بات بالکل سچ ہے کہ سب تب تک ہی ساتھ دیتے ہیں جب تک آپ کے پاس پیسہ ہوتا ہے پاپا نے اپنا قرضہ اتارنے کے لیے اپنا گھر بیچ دیا کچھ پیسے بچ گئے اس سے انہوں نے ایک چھوٹا سا مکان کڑائے پر لے لیا اور اس کا چھ مہینے کا ایڈوانس دے دیا باقی پیسوں کا دو مہینے کا راشن ڈلوایا اب بس چند ہزار روپے ہی رہ گئے تھے وہ بھی کب تک چلتے میرے پاس کوئی ڈگری نہیں تھی کہ میں کوئی نوکری کرتی میں نے بچوں کو ٹیوشن پڑھانا شروع کر دیا لیکن وہ چند  روپے کافی نہیں تھے پاپا  دل کے مریض تھے اور حالات کے بوجھ نے اب تو ان کو نڈھال کر دیا تھا بڑی بہن کو ہم نے کچھ نہیں بتایا تھا کہ وہ پریشان نہ ہو ایک دن میں کسی سکول میں انٹرویو دینے گئی مگر وہاں بھی مایوسی ہوئی کیونکہ میری تعلیم کم تھی تیز چڑچلاتی دھوپ میں بس سٹاپ کے بینچ پر بیٹھ کر بس کا انتظار کر رہی تھی اور مجھے اپنی بے بسی پر رونا آگیا آنسو میرے گالوں پر پھسلتے جا رہے تھے کہ کسی نے پوچھا کہ میں کیوں رو رہی ہوں میں نے چونک کر سر اٹھایا تو میں بہت ڈر گئی مجھ پہ خوف طاری ہو گیا تھا کیونکہ وہ ایک اجنبی شخص تھا اور ہمیشہ مجھے یہاں پر بیٹھا دیکھ کر گھورتا رہتا تھا مگر آج اس کی اتنی جرات دیکھ کر مجھے بہت خوف آیا تھا

میں وہاں سے اٹھ کے دوسری جگہ سمٹ کے بیٹھ گئی مگر وہ وہاں بھی آگیا اور مجھ سے رونے کی وجہ پوچھنے لگا میں نے اسے کہا کہ وہ یہاں سے چلا جائے اور مجھے میرے حال پر چھوڑ دے لیکن وہ نہیں گیا اور کہنے لگا کہ میں اگر چاہوں تو میری مدد کر سکتا ہے میں نے دل میں سوچا کہ یہ مدد کیا کرے گا میری یہ بیچارے تو خود مانگ کر پیٹ پالتے ہیں میں نے اسے کہا کہ مجھے اس کی کوئی مدد نہیں چاہیے اور وہ جائے یہاں سے لیکن وہ نہ مانا اور  تو نہ چار میں نے بتایا کہ میرے حالات اچھے نہیں کوئی ڈھنگ کی نوکری بھی نہیں ملتی یہ سن کر اس نے اپنا مشورہ دیا کہ میں اپنا پارلر کیوں نہیں کھول لیتی اس کی بات سن کر ہنسی کہ اس کے لیے لاکھوں روپے چاہیے اور میرے پاس تو اتنے پیسے بھی نہیں کہ کسی پارلر میں کورس کر سکوں سیکھنے کے لیے بھی پیسے لگتے ہیں یہ سن کر اس نے اپنی جیب سے کاغذ اور قلم نکالا اور کاغذ پہ کچھ لکھا  کاغذ میری طرح بڑھاتے ہوئے بولا یہ میرا نمبر ہے تم سوچ لو پھر مجھے کال کر لینا میں تمہیں پیسے لا دوں گا میں نے پرچی اس کے ہاتھ سے لے لی اور وہاں سے اٹھ کر میں اس واقعے کو بھول گئی رات کو جب میں بستر پہ لیٹی تو اچانک سے میرے ذہن میں جھمکا ہوا اور دن والا سارا واقعہ مجھے یاد آگیا

کہ کیسے میں بس سٹاپ پر بیٹھی رو رہی تھی کہ اچانک وہاں وہ اجنبی شخص آگیا میں سوچ رہی تھی کہ اس کے پاس اتنا پیسہ کہاں سے آیا جو وہ مجھے دینے کا کہہ رہا تھا اور اگر ہیں بھی تو وہ مجھے کیوں دے گا آج کل تو کسی کو کوئی ادھار تک نہیں دیتا اس کی باتوں پر مجھے اعتبار تو نہیں آیا تھا مگر پھر نہ جانے کیا سوچ کر میں نے پرس سے وہ چٹی نکالی جس میں اس نے اپنا نمبر لکھ دیا تھا اور وہ اپنے موبائل میں اس کا نمبر اجنبی مددگار کے نام سے سیو کر دیا اور سو گئی اس واقعے کو کافی دن گزر گئے تھے گھر میں دو وقت کی روٹی کھانی مشکل ہو گئی تھی اب تو وہ ٹیوشنز بھی چھوٹ گئے تھے مجھے اور مما کو فہد کے سکول کی بہت فکر ہو رہی تھی کتنے مہینے ہو گئے تھے وہ گھر پر اداس بیٹھا اپنا سکول بیگ کو کھول کر  گھنٹوں انہیں دیکھتا رہتا اس کے سکول کا بہت حرج ہو رہا تھا اس دن میں اپنی ایک دوست کے گھر گئی  بات کرنے کے مجھے کسی سکول میں اچھی تنخواہ دے کسی سے بات کر کے میں وہاں سے نکلی تو راستے میں ایک بیوٹی پارلر  تھا اسے دیکھ کر مجھے اس اجنبی کی بات یاد آگئی میں اندر چلی گئی اور کہا کہ میں سیکھنا چاہتی ہوں پارلر کی اونر نے کہا کہ وہ کورس کروانے کا ایک لاکھ روپیہ لیتی ہیں

اور ایک سال کا کورس ہے جس میں وہ مجھے سب کچھ سکھا دیں گی یہ سن کر میں مایوس ہو کر وہاں سے یہ کہہ کر نکلی کہ کچھ دن بعد بتاتی ہوں آپ کو لیکن میں ایک لاکھ کہاں سے لاتی میرے پاس تو 10 ہزار روپے بھی نہیں تھے خیر میں گھر آگئی اور کچھ دیر بعد اس اجنبی کا نمبر ملایا اس نے میرا فون کاٹ دیا اور خود کال کی اور پوچھا کہ کیا میں وہی لڑکی ہوں جو اسے بس سٹاپ پر ملی تھی مجھے حیرت ہوئی کہ اس نے میری آواز سنے بغیر مجھے کیسے پہچانا مگر میں نے اس پہ کچھ ظاہر کیے بنا ہی کہا ہاں میں وہی لڑکی ہوں جو اسے بس سٹاپ پر ملی تھی اور پوچھا کہ وہ کہاں سے مجھے پیسے دے گا جب کہ وہ خود بہت غریب ہے یہ بات سن کر وہ ہنس دیا اور کہا کہ تمہیں پیسوں سے مطلب ہے وہ تمہیں مل جائیں گے بولو کتنے پیسے چاہیے میں نے کہا کہ مجھے ایک لاکھ روپیہ چاہیے پارلر کے کورس کے لیے اور میں یہ پیسے اسے لوٹا دوں گی اس نے مجھے اسی بس سٹاپ پر بلایا اور میں نے حامی بھر لی اگلے دن میں وہاں پہنچی تو وہ پہلے سے موجود تھا اس نے میرے ہاتھ میں لفافہ دیا اور خاموشی سے واپس چلا گیا میں نے وہ لفافہ  اپنے پرس میں رکھ لیا اور واپس گھر آگئ کمرے میں آ کر دروازہ بند کر کے میں نے لفافہ کھولا تو میری حیرت کی انتہا رہی جب میں نے دیکھا کہ لفافے میں دو لاکھ روپے پڑے تھے

  میں  اس سے وعدہ کر بیٹھی کہ زندگی میں اسے کبھی بھی میری ضرورت پڑے گی تو میں اس کی مدد ضرور کروں گی وہ مجھے اپنی بہن سمجھے مجھے نہیں معلوم تھا کہ انجانے میں مجھ سے کتنی بڑی غلطی ہو گئی ہے میں نے فون رکھ دیا دوسرے دن پارلر میں پیسے جمع کروائے اور پارلر جوائن کر لیا دن اسی طرح گزرتے جا رہے تھے میں نے بہت کچھ سیکھ لیا تھا اور فہد کو سکول میں داخل کروا دیا اسی طرح سال پورا ہو گیا پالر سے مجھے کورس سرٹیفیکیٹ بھی مل گیا اب میں اپنا پارلر کھولنا چاہتی تھی میں نے اجنبی مددگار کو ایک بار پھر سے کہا  تو اس نے مجھے لفافہ دیا اور کہا کہ میرے ساتھ چلو میں پریشان ہو گئی تو بولا میں نے تمہارے لیے  پارلردیکھا ہے جو کوئی کرائے پر دے رہا ہے میں اس کے ساتھ چلی گئی اور سارے معاملات طے کیے اور گھر آگئی دوسرے دن سے پالر پر بیٹھ گئ اور پارلر اوپن کا بورڈ لگا دیا اپنی مدد کے لیے ایک لڑکی بھی رکھ لی پارلر چل پڑا تھا گھر کے حالات ٹھیک ہونے لگے تھے میں تو اسے اپنا محسن سمجھ بیٹھی تھی اور دن رات اسے دعائیں دیتی تھی خواتین جوک در جوک آتی ان میں سے ایک خاتون آپ بھی تھی جنہوں نے مجھے پسند کیا اور مجھے اپنی بہو بنا لیا میری شادی کی تیاری ہو رہی تھی کہ ایک دن اجنبی مددگار میرے پاس آیا اور بولا کہ اسے پیسے نہیں چاہیے یوں اس نے مجھے میری ہی نادانی میں کیا ہوا وعدہ یاد کروایا جو میں نے اسے دو لاکھ روپوں کے بدلے کیا تھا میں اس کی بات سن کر کافی پریشان ہو گئی تھی کہ نہ جانے اب وہ مجھ سے کیا مانگ لے لیکن میں نے دل کرا کر کے کہا کہ مانگو کیا مانگتے ہو

لیکن اس کی بات سن کر میرے اوسان خطا ہو گئے اس نے مجھ سے کہا کہ تم مجھے اپنے ساتھ اپنے جہیز میں لے کر جاؤ میں حیران ہوئی مگر یہ کیسے ہو سکتا ہے تو وہ بولا میں تمہیں بتاتا ہوں تم مجھے اپنے ساتھ کام والی بنا کر لے جاؤ گی میں ہر وقت خود کو ڈھانپ کر رکھوں گا کسی کو خبر تک نہ ہوگی کہ میں لڑکی نہیں بلکہ لڑکا ہوں اس کی بات سن کر مجھے غصہ آنے لگا تھا تب ہی تو میں چلائی تھی اور میں یہ سب کیوں کروں گی میں مانتی ہوں تم میرے مددگار ہو میں تمہارے احسان مند بھی ہوں مگر میں اپنے ہونے والے شوہر کو اتنا بڑا دھوکا ہرگز نہیں دے سکتی میں کیوں  غیر مرد کو اپنے گھر لے جاؤں مجھے کیا معلوم تم کسی ارادے اور کیسی نیت کے ساتھ جانا چاہتے ہو میں ایسا نہیں کروں گی میں نے مڑ کر اپنی تجوری کو کھولا جو نوٹوں سے بھرا پڑا تھا میں نے دو لاکھ پہلے سے ہی علیحدہ کر کے ایک لفافے میں ڈال دیے تھے کہ نہ جانے کب میرے مددگار کو ان پیسوں کی ضرورت پڑ جائے میں نے وہ لفافہ اس کی جانب بڑھا دیا اور کہا کہ  لو اس میں پورے دو لاکھ روپے ہیں یہ لو اور جاؤ یہاں سے آج سے تمہارا اور میرا رشتہ ختم  میری بات سن کر ایک دم سے میرا پاؤں میں گر کر گرگرانے لگا تھا میں خوفزدہ سی ہو کر پیچھے ہٹی تھی وہ زار و قطار رو رہا تھا اس نے میرے سامنے ہاتھ باندھ لیے تھے وہ ایسے رو رہا تھا جیسے ایک چھوٹا بچہ بھیڑ میں اپنی ماں سے جدا ہو کر خوفزدہ ہو گیا ہو رو رہا ہو گھبرا رہا ہو اس کی حالت دیکھ کر میرا دل پسیج گیا میں بھی زمین پر اس کے پاس بیٹھ گئی بلاول بھائی کیا بات ہے اپ کو کیا ہو گیا ہے میری بات سن کر وہ پر امید نظروں سے مجھے تکنے لگا اس نے ہاتھ جوڑ کر کہا کہ نور مجھے میری ماں سے ملا دو

کون سی ماں میں حیران ہوئی تھی اس نے کہا تمہاری ہونے والی ساس میری ماں ہے میں اپنی ماں کی خدمت کرنا چاہتا ہوں مجھے تم اپنے ساتھ لے چلو میری آرزو کو پورا ہو لینے دو اس کی بات سن کر مجھے دھجکا سا لگا کے کیسے ہو سکتا ہے کہ وہ میرے شوہر کا بھائی ہو اگر وہ میری ساس کا ہی بیٹا ہے تو یوں جانا چاہتا ہے ہمارے گھر بے تحاشہ سوال اٹھ رہے تھے میرے ذہن میں جب وہ بولا تھا مجھے معلوم ہے کہ تم میری بات سن کر حیران ہو گئی ہو تم یہ بھی سوچ رہی ہوگی کہ اگر میں سچ کہہ رہا ہوں تو سیدھے طریقے سے کیوں نہیں چلا جاتا گھر میری مجبوری ہے نور بہن وہ اب بھی رو رہا تھا روتے روتے وہ مجھے اپنے داستانیں حیات سنانے لگا تھا میں جب پیدا ہوا تھا نا میری اماں خوش نہیں ہوئی تھی اس کو ڈھیروں وسوسوں نے ان گھیرا تھا تم خود سوچو کہ ایک لڑکی سسرال بیا کر جائے اور جلدی امید سے بھی ہو جائے تو وہ کتنی خوش ہوتی ہے اس کو لگتا ہے کہ آنے والا بچہ سسرال میں اس کے قدم مضبوط کر دے گا مگر میری پیدائش کے بعد میری اماں کے قدم مضبوط تو نہ ہوتے بلکہ وہ دھتکاری جاتی میری دادی میری اماں کو ایک منٹ میرے لیے بھی برداشت نہ کرتی عین ممکن تھا کہ میرا باپ ہسپتال کے بیڈ پر ہی میری اماں کو طلاق دے کر چلا جاتا حالانکہ اس میں قصور میری اماں کا تو نہیں تھا یہ تو اللہ کی مرضی تھی کہ اس نے مجھے نہ لڑکا بنایانہ لڑکی میرے لیے تیسری جنس کا انتخاب کیا بلاول بھائی کی باتیں سن کر میں سکتے میں آگئی تھی جبکہ اس کے آنسو تھمنے کا نام نہیں لے رہے تھے جب نرس نے بتایا کہ تیرے گھر تیسری جنس کی پیدائش ہوئی ہے تو اماں نے نظروں ہی نظروں میں اسے التجا کر ڈالی

وہ بھی اماں کا دکھ سمجھ کر چپ ہو گئی اور ابو کو مبارکباد دی کہ آپ کے گھر لڑکا پیدا ہوا ہے سب خوشی سے پھولے نہ سماتے تھے ہر کوئی میری اماں کے آگے پیچھے ہو رہا تھا جب کہ وہ خاموشی سے کونے میں بیٹھی آنسو بہاتی جاتی تھی میں نے جب بھی اماں کو دیکھا وہ روتی رہتی تھی مجھے نہیں معلوم اس نے کیسے مجھے گھر والوں سے چھپا کر اتنا بڑا کیا تھا گھر میں کسی کو کچھ معلوم نہ ہو سکا تھا اماں مجھے لڑکوں والے کپڑے پہناتی تھی لڑکوں والے سکول میں ڈال دیا تھا لیکن مجھے لڑکے نہ بھاتے تھے میرا دل کرتا تھا کہ میں  بلے سے نہیں بلکہ اپنی چھوٹی بہن رافیہ کے گڑیا سے کھیلوں مجھے اماں کی سرخیاں اچھی لگنے لگتی تھی ان کے زیور سب بہت اچھا لگتا تھا میری دادی نے  اماں کو بلاکر کہا کہ دیکھ تیرا بلاول تو لڑکی بن گیا اس دن اماں مجھے بازو سے پکڑ کر کمرے میں لے گئی کمرے کا دروازہ بند کر کے مجھے ابو کی بیلٹ سے بہت مارا تھا میرا جسم نازک تھا میں چھ سال کا بچہ ہی تو تھا میرا ماس ادھر چکا تھا میں بہت چیخا تھا لیکن اماں کو مجھ پر رحم نہیں آیا تھا جب میرے جسم سے خون بہنے لگا تو ان کا ہاتھ رک گیا اب وہ مجھ سے بھی زیادہ رو رہی تھی  دادی  دروازہ بجائے لیکن اماں نے دروازہ نہ کھولا اور اپنا سر دیوار سے مار مار کر لہولہان کر چکی تھی ہم دونوں کو ہسپتال لے جایا گیا وہ میرے لیے تڑپ رہی تھی اور میں اپنی ماں کے لیے میں کتنے ہی دن اماں کی تکلیف کو یاد کر کے روتا رہا اور اماں تو ہر وقت ہاتھ جوڑ کر مجھ سے معافیاں مانگتی رہتی اس دن اماں نے مجھے سمجھایا کہ اگر میں نے دوبارہ ایسی حرکت کی تو ابو مجھے ایسی جگہ چھوڑ آئیں گے جہاں ہر روز ایسی ہی مار پڑے گی اس دن کے بعد میں نے ایسا کرنے کے بارے میں سوچا نہیں کئی بار دل چاہا  کئی سال بیت گئے اماں کی مار بھی بھول گئی لیکن جو سبق وہ ہر روز پڑھایا کرتی تھی میں وہ ایک کان سے سن کر دوسرے سے نکال دیتا تھا

لیکن ایک دن میں نے اپنی زندگی کی سب سے بڑی غلطی کر ڈالی مجھے یاد ہے جب میں 10 سال کا ہوا تو ابو نے گھر ہی میں چھوٹی سی سالگرہ منانے کا سوچا اماں میرے لیے بہترین پینٹ شرٹ نکال کر رکھ گئی تھی لیکن میں نے رافیہ کی استری کی ہوئی فراک پہن لی اماں کی سرخی لگا کر جب میں باہر کیک کاٹنے کے لیے نکلا تو سب ہنس دیے تھے اماں بھی ہنسی میرے سر پر ہلکی سی چپیڑ لگا کر بولیں کہ تمہاری مذاق کی عادت پتہ نہیں کب جائے گی پھر وہ مجھے کمرے میں لے گئی مجھے دوبارہ تیار کرتے ہوئے وہ  رو رہی تھی میں نے وجہ پوچھی تو بولی کہ تم نے بہت غلط کیا ہے اگلے دن اماں مجھے بازار لے گئے لیکن وہ بازار تو نہ تھا وہ مجھے دور ایک قصبے میں لے گئی گلیوں سے گزرتے ہوئے مجھے وہ ایک گھر میں لے گئی جہاں سب ہی تیسری جنس کے افراد تھے بات بات پر تالی پیٹتے تھے مجھے بہت گھبراہٹ ہو رہی تھی میں نے امی کا ہاتھ ہلا کر کہا اماں یہاں سے چلو میرا سانس گھٹ رہا ہے مگر وہ ایک بزرگ سے گرو کے پاس بیٹھ کر نہ جانے کیا باتیں کر کر کے رو رہی تھی گڑو نے مجھے اپنے پاس بلا کر کہا کہ آج سے میں تمہاری ماں ہوں میں نے اماں کا کندھا پھر سے ہلا کر کہا اماں اٹھو گھر چلیں میرا دل انجان نے خوف سے کانپ رہا تھا وہی ہوا جس کا ڈر تھا میری اماں باہر کی طرف چل پڑی میں ان کے پیچھے لٹکا تھا مجھے گروہ کے چیلوں نے پکڑ لیا میں چیختا چلاتا رہا اماں نے پیچھے مڑ کر بھی نہ دیکھا تھا میرا ننھا سا دل کانپ رہا تھا میرا دل کیا کہ میں تمام مسجدوں کے سپیکر لے آؤں اماں کو آوازیں دوں وہ سن کر رک جائیں ہائے میں بہت بے بس تھا میرا کمزور سے بدن میں اتنا زور کہاں تھا کہ میں ان کے ہٹے کٹے چیلوں سے خود کو چھڑا لیتا میں ساری رات دھاڑیں مار مار کر روتا رہا گڑو مجھے پیار سے سمجھاتا رہا مگر میں سمجھنے کی عمر میں تو تھا نہیں صبح سویرے ہی اماں مجھ سے ملنے چلی آئی میں ان سے لپٹ کر ایک بات پھر بہت رویا اماں نے مجھے اپنے ہاتھوں سے کھانا کھلایا اور چلی گئی میرے کسی سوال کا جواب دیے بغیر  وہ چپ ہی رہیں گرو مجھے پیار کرتا تو مجھے اس سے گھن آتی میں سب سے الگ تھلگ بیٹھا گھر والوں کو یاد کر کے روتا رہتا

ایک دن گروہ میرے پاس آکر بیٹھ گیا میں رو رہا تھا تو وہ بھی رونے لگا  گرو نے مجھے بتایا تھا کہ میں انہی جیسا ہوں مجھے اب ان کے ساتھ ہی رہنا پڑے گا مجھے بہت غصہ آیا تھا مجھے یہاں آئے ہوئے ایک مہینہ ہو گیا تھا اماں نے مجھے بتایا تھا کہ سب مجھے یاد کر کے بہت روتے ہیں لیکن اماں نے ان سے جھوٹ بول رکھا تھا کہ میں گم ہو گیا ہوں مجھے اس دن پتہ چلا کہ اس سب کے پیچھے میری اماں ہی تھی وہ مجھے اپنے ساتھ رکھنا ہی نہیں جاتی تھی میں نےسمجھوتا کرنا سیکھ لیا تھا اب میں اماں  کو زچ کرنے کی کوشش کرتا گرو نے ڈانس سیکھنے کا کہا تو میں نے فورا ہامی بھر لی اب میں  میک اپ کر کے اماں سے ملتا تھا تاکہ وہ غصے میں آ کر مجھے گھر لے چلیں مگر اماں کا دل نہ پگھلا گرو نے میرے فن کو تراش کر کے مجھے ہیرا بنا دیا تھا اب میں مکمل تیار ہو چکا تھا اماں ملنے آتی تو میں نہ ملتا پورے شہر میں میرا چرچا ہونے لگا تھا میں اب جوان ہو گیا تھا اور مزید حسین بھی میں نے خوب دولت کمائی میرا گرو بہت ضعیف ہو چکا تھا میں سارا سارا دن اس کی خدمت کرتا اس کے لیے ہر آسائش کا انتظام کیا گرو مجھے ہر وقت دعائیں دیتا رہتا ایک دن اس نے مجھے اپنے پاس بٹھا کر کہا کہ میری خواہش ہے کہ تم قرآن سیکھو اس نے مجھے پتہ دیا کہ میں وہاں جاؤں اتنا کہہ کر وہ انتقال کر گیا نا چاہتے ہوئے بھی مجھے اس پتے پر جانا پڑا میں دروازے پر کھڑا تھا جب مجھے گھر کے اندر سے بہت ہی خوبصورت آواز میں قران پاک کی تلاوت سنی میں وہاں جم سا گیا پھر وہی آواز اس ایت کا ترجمہ پڑھنے لگی تھی ترجمے میں اللہ پاک اپنے گناہ گار بندوں سے وعدہ کر رہا تھا کہ اگر کوئی برائی سے پلٹ آئے اور اللہ سے اپنے گناہوں کی معافی مانگے تو اللہ بڑا معاف کرنے والا ہے اس آیت نے مجھ پر بڑا اثر کیا تھا

میں گھر آ کر روتا رہا اللہ سے معافی مانگتا رہا یوں میں نے قرآن کی تعلیم حاصل کرنا شروع کر دی ڈانس وغیرہ چھوڑ دیا اپنا پیٹ پالنے کے لیے دہاڑی کرنے لگا تب مجھے روزانہ جن آنکھوں کا اور جس طرح کے لوگوں کا سامنا کرنا پڑتا تھا یہ میں ہی جانتا تھا تب مجھے اماں کی مجبوری سمجھ آئی اس کی بیٹی بھی جوان ہو رہی تھی بھلا تیسری جنس کے انسان کی بہن کو کون بیا تامیں نے اپنا سارا پیسہ جمع کر کے رکھا تھا تاکہ کسی ضرورت مند کے کام آ سکے تو مجھے ضرورت مند لگی اس لیے میں نے تمہیں دے دیا میں اپنی ماں سے ملنے کا شدید خواہش مند تھا میں ان کی خدمت کر کے خدا کو راضی کرنا چاہتا تھا ایک دن میں تم سے ملنے پارلر آیا تو میں نے وہاں اپنی ماں کو دیکھ لیا تھا پھر پتہ چلا کہ وہ تمہیں اپنے بیٹے یعنی میرے بھائی سے بیانا چاہتی ہیں تب ہی تو میں تمہارے پاس چلا آیا بلاول  رو دیا تھا اور میں بھی روتی رہ گئی تھی امی جان اس کی باتیں سن کر میں خود کو روک نہیں پائی تھی کیا میں نے غلط کیا میری بہو مجھ سے سوال کر رہی تھی جبکہ میں تو زمین میں گھس گئی تھی میں بہو کے گلے لگ کر بڑا روئی تھی مجھے میرا ننھا سا بلاول بڑا یاد آیا تھا اس نے کیسی کیسی سختیاں جیلی تھی میں بھاگ کر اس کے کمرے میں گئی تو وہ اپنا سامان پیک کر کے بیٹھا تھا مجھے دیکھ کر میرے قدموں میں گر گیا میں نے اس کو اٹھایا اور اس کے اگے ہاتھ جوڑ کر اپنی ہر غلطی کا اعتراف کیا تھا میں نے گڑگڑا کر اس نے معافی مانگی تھی اس نے مجھے معاف کر دیا

Australia’s vibrant and diverse cultural landscape makes it a top destination for international students seeking an enriching educational experience. With a multicultural society that celebrates differences and fosters inclusivity, student life in Australia offers a unique opportunity for cultural exchange and personal growth. In this article, we explore the rich tapestry of cultural diversity within Australian universities and the various ways in which international students can immerse themselves in this dynamic environment.

Celebrating Multiculturalism:
Australia prides itself on being a multicultural nation, with a population comprising people from diverse cultural, ethnic, and linguistic backgrounds. This diversity is reflected in the student body of Australian universities, where students from all corners of the globe come together to pursue their academic aspirations. Whether it’s sharing traditional dishes, celebrating cultural festivals, or engaging in cross-cultural dialogue, Australian universities provide a welcoming environment where students can embrace their cultural identities while also learning from others.

Support Services for International Students:
Recognizing the unique needs of international students, Australian universities offer a range of support services to help them adjust to life in a new country. From orientation programs and academic advising to counseling services and language assistance, these resources aim to ensure that international students feel supported and empowered to succeed academically and socially. Additionally, many universities have dedicated multicultural centers or student clubs where students can connect with others from similar cultural backgrounds and participate in cultural events and activities.

Cultural Exchange Opportunities:
One of the most enriching aspects of student life in Australia is the opportunity for cultural exchange. Whether through study abroad programs, international student associations, or community engagement initiatives, students have countless opportunities to engage with people from different cultures and backgrounds. These interactions not only broaden students’ perspectives and deepen their understanding of global issues but also foster lifelong friendships and professional networks that transcend borders.

Exploring Australia’s Cultural Heritage:
Beyond the campus walls, international students have the chance to explore Australia’s rich cultural heritage and natural beauty. From the iconic landmarks of Sydney and Melbourne to the ancient landscapes of the Outback, Australia offers a diverse array of experiences for students to discover. Whether it’s learning about Indigenous culture, trying Australian cuisine, or participating in outdoor adventures, students can immerse themselves in the unique charm and hospitality of the Land Down Under.

Conclusion:
Student life in Australia is a melting pot of cultures, where diversity is celebrated, and differences are embraced. With its inclusive community, comprehensive support services, and abundant opportunities for cultural exchange, Australia offers international students an enriching and transformative experience. By engaging with people from diverse backgrounds, exploring new perspectives, and embracing the spirit of multiculturalism, students can truly make the most of their time studying in Australia.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *